19418

*اسلام آباد : وزیر اعظم ٹاسک فورس جم سٹون  کے چیئرمین گل اصغر خان بگھور کا جم سٹون نمائش کی افتتاحی تقریب سے خطاب*

اپشیا APCEA کے تمام ممبران کا شکرگزار ہوں جنہوں نے اس نمائش کا انعقاد کیا
ستمبر میں وزیراعظم کو ہم نے اس شعبے  کی بریفنگ دی
انڈیا کی مارکیٹ 40 ہزار ملین ڈالر تک چلی گئی
جبکہ بھارت کے پاس جم سٹون کی انڈسٹری نہیں ہے
پاکستان کے پاس جم سٹون ہے اور ہم 10 ملین ڈالر کی ایکسپورٹ کر رہے ہیں
اس کا مطلب ہے کہ کچھ حکومتی ادارے اپنا کام نہیں کر رہے
جو ایکسپورٹ اپشیا کررہی اس سے پاکستان کی ایکسپورٹ بڑھے گی
ہم اس ایکسپورٹ کر 5 ملین ڈالر مزید بڑھانے کی کوشش کر رہے ہیں
ہم نے ابھی تک جم سٹون کے حوالے سے 26 میٹنگز کی ہیں
ان میں ہم نے میڈ ٹرم اور لانگ ٹرم منصوبوں کی پلاننگ کی
جو انڈیا، سری لنکا اور بنگلہ دیش نے اس شعبے میں کیا ہم بھی اسےی راہ پر چلیں گے
اتنے سارے اداروں میں ابھی تک اس شعبہ کی ترقی کے لئے  کوئی ادارہ نہیں بن سکا
26 تجویز ہم نے اس شعبے کی بہتری کیلئے دی ہیں

نیا بزنس شروع کرنے پر کسی بزنس مین پر ٹیکس نہیں لگایا جائے گا کی تجویز دی
تاکہ بزنس مین آسانی سے اس شعبہ میں آ سکیں
گولڈ ریفائنری کا لائسنس جاری کیا جائے گا
سٹیٹ بینک کو ہم نے تجویز پیش کی تاکہ آسانی سے قرض کی سہولت میسر ہو سکے
دنیا آج ای کامرس پر منتقل ہو چکی ہے
پاکستان جم اینڈ جیولری ایکسپورٹ کونسل نام تجویز کیا گیا ہے جو اس شعبہ کو ملے گا
جو پاکستان میڈیکل اینڈ ڈینٹل کونسل کی طرف کام کر ے گا
جم سٹون کے بزنس کو بڑھانے کے لئے قانون سازی کی ضرورت ہے جس پر کام شروع کر دیا ہے
ہر صوبے سے ریجنل منیجرز کو شامل کریں گے تاکہ تجویز لی جاسکیں
آئندہ ہفتے میں ہم وزیراعظم سے ان تجاویز پر مزید میٹنگ کریں گے
اس شعبے میں اصلاحات کے بعد ہم 5 ملین ڈالر ایکسپورٹ بڑھائیں گے

 

*حاجی دوست محمد*، چیئرمین نمائش جم سٹون
حکومت کی طرف سے ہمیں پوری معاونت فراہم کی گئی ہے
ہمارے اس سیکٹر کو ایک انڈسٹری کی حیثیت دی جائے
ای کامرس کو بنیادی حیثیت دی جائے، اور اسکا نوٹیفکیشن جاری کیا جائے
ہمارے شعبے سے وابستہ تمام لوگ بھی حکومت سے پورا تعاون کریں تاکہ اس شعبہ کو عروج پر پہنچایا جائے

*حاجی مشتاق صاحب*
نمائش کسی بھی انڈسٹری کو آگے بڑھانے میں اہم کردار ادا کرتی ہے
ان نمائشوں کا باقاعدہ انعقاد اور حکومتی لیول پر پذیرائی کی حکومت سے درخواست ہے

*ایپشیا کے چیئرمین حاجی مامور*
آل پاکستان کمرشل ایسوسی ایشن 1983 میں قیام پذیر ہوئی
ہماری نمائشوں کے انعقاد کے بعد دنیا کو پتہ چلا کہ پاکستان جم سٹون کی بہت بڑی انڈسٹری ہے
انڈیا کے پاس صرف ہیرا ہے

ہماری گزارش ہے کہ چیرمین ٹاسک فورس چاروں صوبوں سے چیرمین حضرات کی تجویز لیں اور فیصلہ کریں